عمران خان جمہوری وزیراعظم کے طور پر عدم اعتماد کا سامنا کریں شکست ہو تو گھر..

محمد شاہ رنگیلا کے بعد عثمان بزدار کی صورت پنجاب تاریخ کے دلچسپ ترین وزیر اعلی سے محروم ہو گیا، مفتاح اسماعیل
عمران کے وزراء ہماری ٹیبل پر بھی اسی اور نوے کی دہائی میں بیٹھتے تھیہمیں پتہ ہے ان کے کیا مشورے ہوتے تھے، ن لیگی رہنماوں کی مشترکہ پریس کانفرنساسلام آباد(آن لائن)سابق وزیراعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ عمران خان جمہوری وزیراعظم کے طور پر عدم اعتماد کا سامنا کریں شکست ہو تو گھر جائیں محمد شاہ رنگیلا کے بعد عثمان بزدار کی صورت پنجاب تاریخ کے دلچسپ ترین وزیر اعلی سے محروم ہو گیا عمران کے وزراء ہماری ٹیبل پر بھی اسی اور نوے کی دہائی میں بیٹھتے تھیہمیں پتہ ہے ان کے کیا مشورے ہوتے تھے ان خیالات کا اظہار مسلم لیگ ن کے سینئر نائب صدر شاہد خاقان عباسی مفتاح اسماعیل اور خرم دستگیر نے پریس کانفرنس میں کیا انھوں نے یہ بھی کہا کہ عدم اعتماد کا ووٹ قریب آتے ہی حکومت کی بوکھلاہٹ بڑھتی جارہی ہے عثمان بزدار سے ہمدردی کرنا چاہ رہا ہوں پنجاب کا کامیاب وزیراعلی سے دو ہفتے بعد استعفیٰ طلب کرلیاانہوں نے استعفے کا خط بھی وزیر اعظم کولکھااور اس کی منظوری گورنر پنجاب نے دی آج جب وہ اسمبلی پہنچے تو گاڑی پر جھنڈا نہیں تھاجو وزرا آرٹیکل چھ لگانے کا مشورہ دے رہیں یہ وہ لوگ ہیں جو سب سے پہلے عمران کے خلاف گواہی دیں گے اگر ان وزراء نے عدم اعتماد میں مداخلت کی تو آرٹیکل چھ ان پر لگے گادوسرا راستہ اس عوام کو مشکل میں ڈال کر گھر جانا ہے یہ حکومت ختم ہوچکی ہے اعتماد کھو چکے ہیں گھر جائیں آج آئین قانون اور جمہوریت کا تقاضا ہے کہ ایک جمہوری وزیراعظم کے طور پر اس عدم اعتماد کا مقابلہ کریں اور گھر جائیں آپ نے آرٹیکل چھ لگانا ہے تو لگائیں ہم حاضر ہیں جس ملک کی حکومت اپنے ہی دارالحکومت پر حملہ ا?ور ہوجائے تاریخ کیا سوچے گی اگر عدم اعتماد میں کوئی دخل اندازہ ہوتی ہے تو پھر انتظامیہ کو جوابدہ ہونا پڑے گا اس وقت ان افسران کو شیخ رشید عمران خان اور پرویز خٹک نہیں ملے گا آپ کو پھر جیل جانا پڑے گاڈی جی ایف آئی اے کو بھی کہوں گا آپ نے لاہور میں پراسیکیوٹر بھیجاآپ کو کس نے اختیار دیا کہ آپ نے عدم اعتماد سے پہلے عدالت میں کس لئیے درخواست دی ہیآپ کو جواب دینا پرے گا ان افسران فائدہ اٹھاکر عہدے حاصل کرلئے ہیں اب یہ افسران اپنی نوکری کو داؤ پرمت لگائیں کل کو گلہ بھی نہ کریں اور سفارشیں بھی نہ کرواناشوکت ترین کو ساتھ بیٹھا کر کہیں گے عوام کو حقیقت بتائیں اس ملک کو صحیح معنوں میں چلائیں گیافسران آئین اور قانون کی پاسداری کریں کل پارلیمانی عمل میں کوئی مداخلت ہوئی تو وزارت داخلہ اور انتظامیہ پر عائد ہوگی رمضان المبارک آرہا ہے لیکن عوام کیلئے کوئی ریلیف نہیں ہیانتظامیہ پریشان ہے کہ اشتہاروں پر کس کی تصویر لگائیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button

Adblock Detected

Please Disable adblocker on your Browser