نوازشریف کی سزا: پاکستان کی سیاست کیا رخ اختیار کرے گی

Nawaz Sharif Jailed

نوازشریف کی سزا: پاکستان کی سیاست کیا رخ اختیار کرے گی

پاکستان کی تاریخ کا ایک اور بڑا فیصلہ گذشتہ روز احتساب عدالت کی طرف سے سامنے آگیا۔ فیصلے کے مطابق سابق وزیراعظم پاکستان اور پاکستان کی اہم سیاسی جماعت کے تاحیات رہنما میاں محمد نوازشریف کو دس سال قید اور اسی لاکھ پونڈ جرمانے کی سزا دی گئی ہے۔ ان کی بیٹی مریم نوازشریف کو سات سال قید اور بیس لاکھ روپے کا جرمانہ ہوا ہے اور کیپٹن صفدر کو ایک سال قید بمشقت سزاسنائی گئی ہے۔

کیا نوازشریف واپس آئیں گے؟

یہ فیصلہ بہت اہم ہے لیکن اس کے نتائج کیا نکلتے ہیں اس کا انحصا ر اب میاں نوازشریف کے فیصلے پر ہوگا کہ وہ فیصلے کے بعد ملک واپسی کا فیصلہ کرتے ہیں یا وہیں رہنے کا فیصلہ کرتے ہیں۔ سیاسی مبصرین کے مطابق اہم فیصلہ عدالتوں کا نہیں بلکہ اس فیصلے کے جواب میں نوازشریف کا فیصلہ ہے۔ مبصرین کے مطابق اگر نوازشریف واپس آتے اور سزا بھگتنے کا فیصلہ کرتے ہیں تو ان کی سیای پوزیشن مستحکم ہوگی۔ اور اگر وہ لندن قیام کو ہی ترجیح دیتے ہیں تو ان کے سیاسی نظریے کو نقصان پہنچے گا۔

فیصلے کا پاکستانی سیاست پر اثر کیا پڑے گا؟

آنے والے انتخابات پر اس کا فیصلہ کتنا اثر انداز ہوگا اس کی حتمی حقیقت تو ووٹنگ کے دن ہی سامنے آسکتی ہے لیکن سیاسی مبصرین کا خیال ہے کہ پاکستانی ووٹروں کی ایک بڑی تعداد ابھی تک ایسی ہے جس نے یہ فیصلہ نہیں کیا کہ انہوں نے کس کو ووٹ دینا ہے۔ ایسے لوگوں کے حوالے سے یہ فیصلہ ، یوں فیصلہ کن ہو سکتا ہے کہ شاید ایسے ووٹر ن لیگ کو کمزور گھوڑا سمجھتے ہوئے اسے ووٹ نہ دیں۔ ویسے تو یہ بھی ممکن ہے کہ شاید اس سے مسلم لیگ کا ووٹ بنک بڑھے۔

اس فیصلے کا ایک نتیجہ یہ بھی ہے کہ مریم نوازشریف اور کیپٹن صفدر بھی الیکشن کے لیے نااہل ہو گئے ہیں۔  اب دیکھنا یہ ہے کہ مستقبل میں پاکستان کی سیاست کا اونٹ کس کروٹ بیٹھتا ہے۔ یاد رہے کہ صدر مسلم لیگ ن شہباز شریف نے اس فیصلے کو مسترد کر دیا ہے۔ جبکہ تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے سوات میں دوران جلسہ اس فیصلے کو سراہا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to top