3- جب را نے کہا ’’یہ تو ہمارا فرض تھا‘‘

3- جب را نے کہا ’’یہ تو ہمارا فرض تھا‘‘

آئی ایس آئی اور بھارتی خفیہ ایجنسی را کے سابق سربراہان کی تہلکہ خیز کتاب کا خلاصہ ۔۔۔ تیسرا باب

 جنرل درانی کے بیٹے کاروباری سلسلے میں بھارت گئے

جنرل اسد درانی نے بتایا کہ ان کے بیٹے عثمان مئی 2015 میں بھارت میں پھنس گئے تھے۔ لیکن را نے انہیں وہاں سے نکلنے میں مدد دی۔ عثمان جرمنی کی ایک کمپنی کے بانیوں میں شامل تھے۔ اس کمپنی کا ایک دفتر بھارت میں بھی کھولا گیا۔ عثمان بیس برس سے جرمنی میں آباد تھے اور انہیں کمپنی کے لیے کام کرتے ہوئے پندرہ برس ہو گئے تھے۔ وہ کمپنی کے سافٹ ویئر ڈویژن کے سربراہ تھے۔ لیکن انہوں نے کبھی جرمن شہریت نہیں لی تھی اور وہ خود کو محب وطن پاکستانی کہتے تھے اور اس وجہ سے جرمن شہریت لینے سے انکاری تھے۔ عثمان پاکستانی پاسپورٹ پر بھارتی شہر کوچی کا ویزہ لے کر وہاں پہنچے۔ ان کی آمد کا مقصد کمپنی کے لیے نئے لوگ بھرتی کرنا اور عملے کی حوصلہ افزائی کرنا تھا۔ جنرل درانی کہتے ہیں کہ کوچی شہر کے لوگ اردو نہیں بول سکتے تھے۔ لیکن انہیں ایک پاکستانی کو اپنے درمیان دیکھ کر بہت خوشی ہوئی۔ وہ عثمان سے یہ بھی کہتے رہے کہ وہ اگلی بار اپنے بیوی بچوں کو بھی ساتھ لائیں۔

جنرل درانی کے بیٹے کو طیارے سے اتار دیا گیا

جنرل درانی کے بیٹے عثمان جب جرمنی واپس جانے لگے تو کوچی کے عملے نے ان کی فلائٹ ممبئی سے بُک کروا دی۔ عثمان نہیں جانتے تھے کہ بھارت میں آنے والے پاکستانی صرف اسی شہر میں رہ سکتے ہیں جس کا ویزہ موجود ہو۔ کسی نئے شہر جانے کے لئے انہیں پولیس سٹیشن اور غیرملکیوں کے رجسٹریشن آفس سے کلیئرنس لینا پڑتی ہے۔ جب وہ ممبئی ائرپورٹ پر پہنچے تو ائرپورٹ کے عملے نے دیکھا کہ ان کے پاسپورٹ پر ممبئی کا ویزہ نہیں ہے پھر وہ اس شہر میں کیسے داخل ہوئے؟ اس لئے انہیں طیارے میں سوار ہونے کی اجازت نہیں دی گئی اور ائرپورٹ سے جانے کے لیے کہہ دیا گیا۔ عثمان نے اپنے والد کو صورتحال سے آگاہ کیا جو اتنے پریشان ہوئے کہ انہوں نے امرجیت سنگھ دولت کو فون کردیا۔ امرجیت سنگھ دولت کہتے ہیں کہ ان کے لیے دہلی کے مقابلے میں ممبئی میں اپنے تعلقات استعمال کرنا زیادہ آسان تھا۔

را کی اطلاع پر جنرل مشرف کی جان بچی تھی، را چیف کا انکشاف

امرجیت سنگھ دولت  نے را میں اپنے سابق کولیگ سے رابطہ کیا۔ یہ عہدیدار2003 میں را کا حصہ تھے جب را کی طرف سے آئی ایس آئی کو دی گئی ایک خفیہ اطلاع پرجنرل مشرف کی جان بچا لی گئی تھی۔ امرجیت کو یقین ہے کو اس اطلاع میں ان کے کولیگ نے بھی کردار ادا کیا تھا۔

جنرل درانی کے بیٹے کو بھارت سے کیسے نکالا گیا

عثمان بھارت کے کسی سرکاری دفتر میں پہنچ گئے۔ جہاں وہ جس افسر کے پاس بھی جاتے تھے انہیں کہا جاتا کہ وہ صاحب اپنی سیٹ پر موجود نہیں ہیں۔ تاہم کسی نے بھی عثمان کو یہ نہیں بتایا کہ ان کے پاس ممبئی کا ویزہ ہی موجود نہیں ہے۔ جنرل درانی اور ان کی اہلیہ پریشان تھے کہ اگر کسی کو معلوم ہو گیا کہ آئی ایس آئی کے سابق سربراہ کا بیٹا ممبئی میں گھوم رہا ہے تو کیا ہو گا۔ کیونکہ ممبئی شہر کے لوگ26/11 کے واقعات نہیں بھُولے تھے۔ حتیٰ کہ جس ٹیکسی میں عثمان نے سفرکیا تھا اس کا ڈرائیور بھی حالات سے آگاہ تھا۔ ایک قُلی نے بھی عثمان کو مشورہ دیا کہ وہ کوچی واپس چلے جائیں۔ جنرل درانی نے امرجیت سنگھ دولت کو کئی بار فون کیا اور پوچھا کہ کیا عثمان کو واپس کوچی بھیج دیا جائے۔ تاہم امرجیت سنگھ دولت نے ان سے کہا کہ ہمارے لوگ اس حوالے سے کام کررہے ہیں اور انشاء اللہ عثمان ممبئی سے ہی طیارے میں بیٹھ کر جائیں گے۔ آپ کو اللہ پر یقین ہے تو مجھے بھی واہے گرو پر بھروسہ ہے۔

اس ساری صورتحال میں چوبیس گھنٹے گزر گئے۔ اس دوران دولت نے بھارتی انٹیلیجنس بیورو کے ایک افسر جیون ورکار سے رابطہ کیا۔ جیون کی مداخلت پر عثمان کو ممبئی ائرپورٹ سے جانے کی اجازت مل گئی۔ عثمان نے جرمنی کے شہر میونخ کے لیے فوری طور پرجرمن ائرلائنز لوفتھانزا کی ویب سائٹ سے اگلی فلائٹ بُک کر لی۔ یوں را کے سابق سربراہ کی کوششوں سے سابق آئی ایس آئی چیف کے بیٹے کو بھارت سے جانے کی اجازت مل گئی۔

جنرل درانی کے بیٹے جرمن شہری بن گئے

عثمان نے جرمنی لوٹ کراپنی بیوی اور دو بیٹیوں کے ساتھ جرمنی کی شہریت اختیار کر لی تاکہ پھر بھارت میں انہیں ایسی مشکل کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ جنرل اسد درانی نے عثمان کے ممبئی سے نکلنے کے بعد امرجیت سنگھ دولت کو فون کیا اور کہا کہ آپ کے واہے گرو پر ایمان نے عثمان کو بچا لیا۔ دولت نے جواب دیا کہ واہے گرو نے کہا تھا کوئی ہندو ہے نہ مسلمان۔ ہم سب ایک ہی مذہب پرپیدا ہوئے ہیں۔ کائنات چلانے والی عظیم ہستی نے عثمان کو بچایا ہے۔ دولت نے جیون کا شکریہ ادا کرنے کے ساتھ ساتھ را میں اپنے سابق ساتھی کو بھی فون کیا۔ اس شخص نے شکریے کے جواب میں جنرل درانی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ان کی مدد کرنا ہمارا فرض تھا کیونکہ آخر وہ بھی ہمارے کولیگ ہیں۔

 ۔۔۔ اگلا باب پڑھئے ۔۔

4- کیا آئی ایس آئی ریاست کے اندر ریاست ہے؟

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to top